یادیں

Updated: Aug 7, 2021

‏یادیں۔۔


تحریر ۔۔ صدام حسین۔۔


آج اس پر اذیت شب میں ۔میں اپنے کمرے کی بالکونی میں بیٹھا کسی اپنے کے ساتھ بیتے حسیں اور پرکیف لمحات کو یاد کررھا ھوں۔۔شدید جاڑے میں بھی میرا بدن بخار سے پھنک رھا ھے۔

آنکھیں نم ھیں۔۔سینہ سسکیوں اور آھوں سے دہل رھا ھے ۔۔سگریٹ کے بہت سے ادھ جلے ٹکڑے پڑے ھیں۔۔باھر

ھلکی ھلکی بارش ھورھی ھے ۔۔

چائے کا تھرماس نجانے کب کا ختم ھوچکا ھے ۔۔

آنکھوں کا ساون میری خالی جھولی کو تر کر رھا ھے ۔۔

میرے الجھے بال ۔ منتشر سوچیں اور کئی دنوں کی بڑھی ھوئی شیو۔۔میری خستہ حالی پہ مسکرا رھی ھیں۔۔

ساتھ والے گھر میں ھلکی ھلکی شہنائی پہ کوئی عطااللہ عیسی خیلوی کا سونگ سن رھا ھے ۔۔

بالکونی کے عین سامنے کوئی گڈریا بانسری کی دھن پہ ایک درد بھرا سرائیکی گانا گنگنا رھا ھے ۔جس میں چاند سے وچھڑی چکور کا ذکر ھے ۔۔اور وچھڑ گئے دو دلوں کا نوحہ ھے ۔

میری بالکونی میں جلتا ھوا میرے سیاہ نصیب

کا دیا دھیمے دھیمے ٹمٹما کر اپنی روشنی کھورھا ھے۔۔

گویا جیسے کوئی لاعلاج بدنصیب مریض حالت_نزع میں ھو ۔۔اور زندگی کی بازی ھار رھا ھو ۔

میرے من کی دنیا اجڑی اجڑی ھے ۔۔مجھ سیاہ نصیب کو بچھڑ گیا ماھی بہت شدت سے یاد آرھا ھے ۔۔میرا سر زانووں پہ دھرا ھے۔۔

پتہ نئیں کیسے ھوتے ھیں وہ لوگ جن کو خالق_کائنات اپنے پیارے بخشتا ھے ۔۔

جو محبت کی دولت پالیتے ھیں۔اور سرخروئی جن کا مقدر ٹھہرتی ھے ۔۔

ائے ستر ماوں سے زیادہ محبت کرنے والے رب۔۔

مجھے کرب و اذیت کی دولت سے کیوں نوازا۔۔

بے شک تیرے فیصلے پر حکمت ھوتے ھیں۔۔

پر میرے اللہ تیری اس بھری پری دنیا میں تجھ سے صرف ایک شخص ھی تو مانگا تھا۔۔میریا ربا ۔۔

میری ان پڑھ بوڑھی ماں میری روتی کرلاتی ڈبڈبائی آنکھیں پڑھ لیتی ھے ۔۔

پھر میرے ساتھ وہ بھی پہروں روتی رھتی ھے۔۔اسے بھی میرے درد۔کرب کا پتہ ھے۔۔

میرے ستر ماوں سے زیادہ پیار کرنے والے رب۔۔۔

بے شک تیرے فیصلے پرحکمت سہی۔پر مجھ جیسا معمولی کمزور اور حساس انسان اس صدمے کو سہہ نہیں پا رھا۔۔۔

اس کی زندگی کا چراغ گل ھونے کے قریب تر ھے۔۔

ائے میرے محبوب۔۔

لوٹ آ ۔

اس سے پہلے کہ میری کملی جھلی آنکھیں پتھرا جائیں ۔۔

اس سے پہلے کہ۔۔۔

آس کا پنچھی کہیں دور افق میں بیٹھ جائے۔ اور روتے روتے کسی سودائی کی آواز بیٹھ جائے ۔۔

اس سے پہلے کہ ۔۔

اکھڑتی سانس کی ڈور ٹوٹ جائے ۔۔

آ میرے محبوب ۔۔

لوٹ آ۔۔۔

لوٹ آ ۔۔

آ میں نے تیرے ساتھ دکھ بانٹنے ھیں ۔۔وہ جدائیوں کے دکھ جنہوں نے میری روح کو چھلنی چھلنی کیا ھوا ھے۔۔

لوٹ آ میری زندگی ۔۔

میرے آنگن میں وہ بیری کا درخت ۔جس کے تلے کبھی ھم نے اکٹھے بیر کھائے تھے۔۔اور ساتھ جینے مرنے کے عہدوپیماں کیے تھے ۔۔وہ بھی آپ کو بہت یاد کرتا ھے۔۔

میرے گھر کی منڈیر پہ بیٹھا کوا بھی اب جب کائیں کائیں کرتا ھے تو ایسے لگتا ھے جیسے وہ کرلا رھا ھو ۔۔

اسے بھی پتہ ھے وچھڑ گئیوں کا دکھ۔۔

لوٹ آ میری زندگی جی۔۔

میری آسوں کا دیا ٹمٹما رھا ھے۔۔

لوٹ آ میرے کملے جھلے ماھی ۔۔

لوٹ آ میرے ھمنوا ۔۔ھچکیوں سے

دہلتے سینے اور نم آنکھوں والا

تجھے تیرا پٹھان ڈھولا بلا رھا ھے ۔۔۔۔


تحریر۔۔ صدام حسین

‎@SAA_afridi

https://t.co/kAyGcpbg0s



5 views0 comments